کھانسی کے معمولی فرق سے کورونا کی تشخیص اب ممکن

عالمی وبا کورونا وائرس سے متاثر ہونے والے لوگوں میں عام طور پر کئی علامات ظاہر ہوتی ہیں جن میں کھانسی، بخار اور سر درد وغیرہ شامل ہے۔
لیکن دنیا بھر سے ایسے لوگ بھی سامنے آئے ہیں جن میں کورونا وائرس سے متاثر ہونے کے باوجود بھی کوئی علامات ظاہر نہیں ہوتی اور یہ لوگ وبا کے پھیلاؤ کے لیے بے حد خطرناک ثابت ہو تے ہیں۔
حال ہی میں امریکا کے میساچوسٹس انسٹی ٹیوٹ آف ٹیکنالوجی (ایم آئی ٹی) کی جانب سے مصنوعی ذہانت (آرٹیفیشل انٹیلیجنس) والا ایک ایسا الگورتھم تیار کیا گیا ہے جو صرف کھانسی کی آواز سے کورونا کی تشخیص کر سکتا ہے۔

محققین کے مطابق کورونا وائرس میں مبتلا ہونے والے شخص کی کھانسی کی آواز عام انسان کی کھانسی سے معمولی مختلف ہوتی ہے اور یہ فرق انسانی کان محسوس نہیں کر پاتے۔
انہوں نے بتایا کہ آرٹیفیشل انٹیلیجنس سے لیس یہ الگورتھم کھانسی کے اس معمولی فرق کو دیکھتے ہوئے کورونا کی تشخیص کی صلاحیت رکھتا ہے۔

محققین کا کہنا ہے کہ ایسے مریض جن میں کورونا وائرس کی علامات ظاہر نہیں ہوتیں ان میں وائرس کی تشخیص کرنا بہت مشکل ہو جاتا ہے۔
سینٹر فار ڈیزیز کنٹرول اینڈ پری ونشن کے مطابق دنیا بھر سے تقریباً 40 فیصد مریضوں میں کورونا وائرس کی علامات ظاہر نہیں ہوتی ہیں۔

میساچوسٹس انسٹی ٹیوٹ آف ٹیکنالوجی (ایم آئی ٹی) کے سائنسدان کا کہنا ہےکہ یہ تشخیصی ٹول کورونا وائرس کے پھیلاؤ کو روکنے میں بے حد مددگار ثابت ہوگا، اسے کسی بھی کلاس روم، آفس یا ریسٹورینٹ میں اندر آنے والے افراد کے داخلے سے قبل استعمال کیا جا سکتا ہے۔

اس ضمن میں ایم آئی ٹی کے محققین کی جانب سے امید ظاہر کی جا رہی ہے کہ اسے امریکی فوڈ اینڈ ڈرگ ایڈمنسٹریشن کی جانب سے منظور کیا جائے گا جس کے بعد یہ اس ایپلی کیشن کو کورونا وائرس کی تشخیص کے لیے استعمال کر سکیں گے۔

اپنا تبصرہ بھیجیں