سردی کی خاص سوغات سنگھاڑا اور اس کے فوائد

سردیوں کے موسم میں گلی کوچوں میں سنگھاڑہ نام کی سوغات عام ملتی ہے جس کی شکل اکثر افراد کو زیادہ پسند نہیں آتی تاہم یہ انسانی صحت کیلیے بے حد مفید ہے۔
سنگھاڑوں کی تاثیر ٹھںڈی ہوتی ہے یہ معدے کی گرمی دور کرنے کے لیے فائدہ مند ثابت ہوتے ہیں جبکہ انہیں کھانے سے پیاس زیادہ محسوس ہوتی ہے جس سے جسم میں پانی کی کمی کو دور کرنے بھی میں مدد ملتی ہے۔
ہمارے ملک میں تو یہ پھل یا سوغات تقریباً سارا سال ہی دستیاب ہوتی ہے مگر اسے سردیوں میں اسے زیادہ شوق سے کھایا جاتا ہے، سنگھاڑے سردیوں میں کھانے کے لیے بہترین چیز ہے، یہ ہلکے بہتے پانی یعنی تالابوں میں اُگتا ہے۔ سنگھاڑا بہت ہی مفید چیز ہے اس میں تمام منرلز موجود ہوتے ہیں۔
گردے کے مریض یا ڈائلیسز کرانے والے افراد اسے استعمال نہ کریں کیونکہ اس میں منرلز بہت زیادہ ہوتے ہیں تو ڈاکٹر کے مشورے کے بغیر اسے ہرگز نہ کھائیں۔
سنگھاڑے پوٹاشیم سے بھرپور ہوتے ہیں جس سے بلڈ پریشر کو کم کرنے میں مدد ملتی ہے اور ایسا ہونے سے امراض قلب کا خطرہ بھی کم ہوتا ہے،5سنگھاڑوں میں روزانہ درکار پوٹاشیم کی مقدار کا 5 فیصد حصہ موجود ہوتا ہے۔

سنگھاڑا مفید پھل ہی نہیں بلکہ بہترین دوا بھی ہے، جسم سے زہریلے مواد کے اخراج کے باعث یہ یرقان کے مریضوں کے لیے بہترین دوا ہے، مریض اسے خام شکل میں کھائیں یا جوس کی صورت میں استعمال کریں، یہ جسم سے زہریلے مواد کے اخراج کے لیے بہترین ثابت ہوتا ہے۔
اگرچہ سنگھاڑے میں موجود کیلوریز دوسری سبزپتوں والی سبزیوں کی نسبت کم ہوتی ہیں تاہم اس میں موجود آئرن، پوٹاشیم، کیلشیم، زنک اور فائبر کی مقدار اس کے استعمال میں اضافہ کا باعث بنتی ہے۔
سنگھاڑے میں کاربوہائیڈریٹس بہت زیادہ مقدار میں پائے جاتے ہیں اس کے علاوہ پروٹین، وٹامن بی اور کاپر بھی کافی مقدار میں ہوتے ہیں، کچا سنگھاڑا ہلکا میٹھا اور خستہ ہوتا ہے جب کہ اُبلا ہوا سنگھاڑا اور بھی زیادہ مزیدار اور مزید ذائقہ دار ہو جاتا ہے۔

کیٹاگری میں : صحت

اپنا تبصرہ بھیجیں