پاکستان بلیک آؤٹ کیوں‌ ہوا؟

پاکستان کے دارالحکومت اور آزادکشمیر سمیت ملک کے بڑے شہروں میں اچانک بجلی کی فراہمی منقطع ہوگئی۔
رپورٹ کے مطابق اسلام آباد کے ریڈ زون سمیت بیشتر علاقوں میں بجلی کی فراہمی اچانک معطل ہوگئی جس کی وجہ سے شہر اقتدار تاریکی میں ڈوب گیا۔
اسلام آباد

اسلام آباد کے ریڈ زون سمیت پوش علاقے بجلی منقطع ہونے کی وجہ تاریکی میں ڈوبے جبکہ پارلیمنٹ لاجز، پرائم منسٹرسیکریٹریٹ، سپریم کورٹ، ایوان صدر،کیبنٹ ڈویژن بھی اندھیرا چھا گیا۔

لاہور

لاہور میں بھی بجلی کا بریک ڈاؤن ہوا جس کی وجہ سے بیشتر علاقے تاریکی میں ڈوب گئے جبکہ کراچی کےمختلف علاقوں میں بجلی بند ہوئی جس کی وجہ سے 70 فیصد علاقے اندھیرے میں ڈوب گئے۔

کراچی

کراچی کے علاقے نارتھ کراچی، شادمان ٹاؤن، ناظم آباد،کورنگی، لانڈھی، ملیر، بفرزون، سائٹ ایریا، میٹرو ول،گلشن معمار میں بجلی غائب ہوگئی۔
ذرائع کے مطابق جامشوروٹرانسمیشن لائن ٹرپ ہونے کی وجہ سے کے الیکٹرک کا نظام بیٹھ گیا۔ علاوہ ازیں، صدر، شاہراہ فیصل، کلفٹن، گلشن اقبال سمیت کئی علاقے اندھیرے میں ڈوب گئے۔ بجلی منقطع ہونے کی وجہ سے شاہراہ فیصل کی اسٹریٹ لائٹس بند ہوگئیں۔

سندھ

صوبہ سندھ کے مختلف علاقوں میرپورخاص، حیدرآباد، نوابشاہ،مٹیاری، سکھر، قاضی احمد، شکارپور، ٹھٹھہ ،گھارو، گجو، ساکرو، گاڑہو، کیٹی بندر میں بجلی کی فراہمی معطل ہوئی۔

خیبرپختونخواہ

خیبرپختونخواہ کے دارالحکومت پشاور ، مردان، شانگلہ، کوہستان، ہری پور، ڈیرہ اسماعیل خان اور ہنگو میں بھی اچانک بجلی کی فراہمی معطل ہوئی۔

پنجاب

پنجاب کے دارالحکومت لاہور میں بریک ڈاؤن کی وجہ سے بیشتر علاقے تاریکی میں ڈوب گئے، جبکہ جہلم میں بھی بجلی کی فراہمی معطل ، شہر اندھیرے میں ڈوب گیا، فیصل آباد کے شہر اور گرد و نواح کے متعدد علاقے بھی اچانک اندھیرے میں ڈوب گئے۔
ملتان کے مختلف اضلاع رحیم یار خان، خان پور، چنیوٹ، میاں چنوں، جہلم، سرگودھا،لالہ موسیٰ، بھلوال، مری، پاکپتن،بھکر،جہلم سمیت دیگر شہروں میں بجلی کی فراہمی معطل ہوئی۔

بلوچستان

صوبہ بلوچستان کے 3اضلاع کےعلاوہ پورے صوبےمیں بجلی اچانک غائب ہوگئی۔ کوئٹہ، سبی، جعفرآباد، نصیرآباد، جھل مگسی ،ہرنائی، صحبت پور، حب،خضدار ،پنجگور، پشین، لورالائی اور تربت کے علاقوں میں بجلی کی فراہمی معطل ہوئی۔ ترجمان کیسکو کے مطابق بجلی کی مین ٹرانمیشن لائن ٹرپ کر گئی جس کی وجہ سے صوبے کے بیشتر علاقوں میں بجلی کی ترسیل میں خلل پیدا ہوا۔

آزاد کشمیر

آزاد کشمیر کے شہر میر پور اور مضافاتی علاقوں میں بھی بجلی کا بریک ڈاؤن ہوا ہے۔
وفاقی وزیر برائے توانائی نے بتایا کہ بجلی کے ترسیلی نظام کی فریکوئنسی اچانک50سےصفرپرآئی جس کی وجہ سے ملک بھر میں بجلی کا بلیک آؤٹ ہوا، فریکونسی گرنےکی وجہ جاننےکی کوشش کی جارہی ہے۔

یہ واقعہ کیوں پیش آیا؟
جنوری کا سرد موسم تھا، ہفتہ اور اتوار کی درمیانی شب آدھا پاکستان سو چکا تھا، کچھ سونے کی تیاری میں تھا، چند بڑے شہروں کے بڑے لوگ ویک اینڈ کی وجہ سے جاگ رہے تھے، اچانک پورا ملک اندھیرے میں ڈوب گیا، جو لوگ جاگ رہے تھے وہ پریشان ہوگئے اور انہوں نے سوئے ہوؤں کو جگانا شروع کیا۔
رات کی تاریکی میں طرح طرح کی افواہیں پھیلنے لگیں، افواہوں بھری یہ خوفناک رات ختم ہوئی تو اتوار کو ایک پریس کانفرنس ہوئی اور قوم کو بتایا گیا کہ کل رات کو بلوچستان کے علاقے نصیر آباد میں بجلی کی ٹرانسمیشن لائنز پر حملہ کیا گیا جس کے باعث ملک بھر میں بجلی کی ترسیل کا نظام متاثر ہوا اور پاور بریک ڈاؤن ہو گیا۔
یہ واقعہ 2021ء کا نہیں بلکہ 2015ء کا ہے، جنوری 2015ء میں بالکل ویسا ہی پاور بریک ڈاؤن ہوا تھا جیسا جنوری 2021ء میں ہوا، فرق صرف اتنا ہے کہ چھ سال پہلے جنوری کے آخری ہفتے میں پاور بریک ڈاؤن ہوا اور 2021ء میں جنوری کے دوسرے ہفتے میں پاور بریک ڈاؤن ہوا۔
دونوں مرتبہ ویک اینڈ تھا دونوں مرتبہ سرکاری حکام نے اتوار کے دن پریس کانفرنس کی۔
چھ سال پہلے وفاقی سیکرٹری برائے پانی و بجلی یونس ڈھاگا نے پریس کانفرنس میں بلیک آؤٹ کی وجہ نصیر آباد میں دہشت گردوں کا حملہ بتائی اور کل اتوار کو وفاقی وزیر توانائی عمر ایوب خان نے وزیراطلاعات شبلی فراز کے ہمراہ پریس کانفرنس میں بتایا کہ گدو میں خرابی کے باعث تربیلا اور منگلا پر دس ہزار سے زیادہ میگاواٹ بجلی اچانک غائب ہو گئی۔

اپنا تبصرہ بھیجیں