جلسے جلوس دو تین مہینے کے بعد کرلیں تاکہ عوام کی جان بچ سکے، وزیراعظم

وزیر اعظم عمران خان نے کہا ہے کہ جلسوں سے حکومت کو کوئی فرق نہیں پڑے گا، لوگوں کی جانیں خطرے میں آئیں گی۔
کورونا کے حوالے سے قومی رابطہ کمیٹی (این سی سی) اجلاس کے بعد گفتگو میں وزیراعظم نے کہا کہ زیادہ لوگوں کے جمع ہونے سے زیادہ کورونا پھیلتا ہے، کوئی اجتماع ہوتا ہے تو ہفتہ دس دن بعد اس کے اثرات نظر آنا شروع ہوجاتے ہیں۔
انہوں نے کہا کہ ملتان میں اپوزیشن کے جلسے کے بعد اسپتالوں کے بستر 64 فیصد بھر چکے ہیں، جلسے جلوس دو تین مہینے کے بعد کرلیں تاکہ عوام کی جان بچ سکے۔

وزیراعظم نے کہا کہ یہ وقت ہےکہ قوم اتحاد کے ساتھ ایس او پیز پر چلے، کورونا کی پہلی ایس او پی ماسک کا استعمال ہے، دوسری لہر میں باقی دنیا کے لیے بھی ایس او پیز پر عمل درآمد مشکل ہوگیا ہے ، ہم نے پہلی لہر میں اپنے لوگوں کو لاک ڈاؤن سے بچایا۔

وزیراعظم عمران خان نے کہا کہ پہلی لہر میں قوم نے ایس او پیز پر عمل کیا ، اپنی مدد یہ ہے کہ سب ایس او پیز پر عمل کریں ، جلسوں سے مجھے کوئی فرق نہیں پڑے گا اس سے لوگوں کی جانوں کو خطرہ ہے ، قوم سے اپیل ہے کہ احتیاط کریں اور کورونا ایس او پیز پر عمل کریں۔
اپوزیشن اتحاد پاکستان ڈیموکریٹ نے حکومت کیخلاف 13 دسمبر کو لاہور میں جلسے کا اعلان کررکھا ہے۔جس کی تیاریاں زور و شور سے جاری ہیں‌اور اس سلسلے میں گزشتہ روز مریم نواز نے کارکنوں‌کے ہمراہ ریلی بھی نکالی اور ان کا جوش دیکھا اور ان کو 13 دسمبر کے جلسے میں آنے کی دعوت دی

اپنا تبصرہ بھیجیں