متحدہ عرب امارات کے ایک ہیئرڈریسر نے بے روزگار افراد کے لیے کیا اہم اعلان

متحدہ عرب امارات کے ایک ہیئرڈریسر نے کرونا وبا کے دوران بے روزگار ہونے والوں کے مفت بال کاٹنے کا اعلان کیا ہے
خلیج ٹائمز کی رپورٹ کے مطابق کرونا وبا کے پھیلنے کے بعد دبئی میں قائم مختلف ملکی و غیرملکی کمپنیوں نے معاشی حالات کو دیکھتے ہوئے اپنے ملازمین کو نوکری سے فارغ کیا تھا جبکہ کچھ نے تنخواہیں کم کرنے سمیت دیگر اقدامات اٹھائے تھے۔
کرونا کی وجہ سے دبئی میں مقیم غیر ملکی افراد کی بڑی تعداد کو اپنی ملازمتوں سے ہاتھ دھونا پڑے، یہی وجہ ہے کہ اب وہ اپنے اخراجات کے حوالے سے پریشان ہیں۔ اور ابھی تک متعدد لوگوں کا روزگار دوبارہ نہیں‌ چل سکا
اس پریشانی کو دیکھتے ہوئے دبئی میں قائم ایک حجام نے کرونا وبا کے دوران بے روزگار یا لاک ڈاؤن سے متاثر ہونے والی خواتین اور مردوں کے مفت بال کاٹنے کا اعلان کیا. اپنے اعلان میں اُن کا کہنا تھا کہ ملازمت سے محروم ہونے والوں سے بال کاٹنے، دھونے یا کسی بھی چیز کے پیسے نہیں لیے جائیں گے، ساتھ ہی خواتین کے لیے اسامیوں کا اعلان بھی کیا گیا۔
سیلون کے مینیجر کا کہنا تھا کہ ’موجودہ صورت حال کے پیش نظر ہر شخص ہی معاشی مشکل میں گھرا ہوا ہے، ہم چاہتے ہیں کہ لوگوں کی کسی طرح سے مدد کریں اور یہ طریقہ سب سے بہترین ہے’۔
انہوں نے لکھا کہ خاص طور پر وہ لوگ جن کی کرونا کے دوران ملازمت گئی وہ اپنے انٹرویو پر جانے سے قبل ہمارے سیلون آئیں ، جہاں اُن کو ہم بغیر کسی معاوضے کے تیار کریں گے تاکہ اُن کے روزگار کا سلسلہ دوبارہ چل سکے.

مینیجر نے بتایاکہ ’ایسے لوگ اپنے ساتھ ملازمت سے نکالے جانے کا لیٹر، اپنا استعفیٰ لے کر آئیں تاکہ ہمیں اس بات کا اطمینان ہوسکے کہ وہ کہیں اور ملازمت نہیں کررہے اور پھر ہم اُن کی مدد کریں‘۔
انہوں نے یہ بھی بتایا کہ امارات کے وہ مقامی شہری جن کے کاروبار متاثر ہوئے انہیں چالیس فیصد رعایت پر سروس فراہم کی جائے گی۔

مینیجر کا کہنا تھا کہ یہ پیکج دو مہینے کے لیے پیش کیا گیا ہے، اکتوبر کے مہینے تک اس آفر کو حاصل کیا جاسکتا ہے . اس کے بعد گاہکوں کو پیسے دے کر سروسز حاصل کرنا ہوں گی۔

اپنا تبصرہ بھیجیں