خوبصورت شاعری کا ایک کلام ملاخطہ کیجئے

دل میں چھپے کسی درد کو کھنگالہ ہو
امانتاََ تمہارے پاس تھا، کبھی استعمالا ہو

سنو! اچھا سا کوئی دن تم یاد کرو
میں جب گِرا اور تم نے سنبھالا ہو

تم جو دل سے نکل جانے کی بات کرتے ہو
میں نے تمہیں کبھی کمرے سے بھی نکالا ہو

ہزاروں شوق پالے ہیں شوق سے تم نے
میں نے تیرےسوا کوئی روگ بھی پالا ہو

کون ہوں؟ جب بھی پوچھا گیا، بتلاو تو
میں نے نہ دیا جناب کا حوالہ ہو

دانستہ خود کو اذیتوں میں مبتلا رکھوں گا
اب کسی طرح تو تیرا لطف دوبالا ہو۔۔

مرتضیٰ شاد

اپنا تبصرہ بھیجیں