کراچی میں لوڈ شیڈنگ کے بعد اب گیس کی بھی قلت ہونے لگی

کراچی کے متعدد علاقوں میں گیس پریشرکی کمی کے باعث شہریوں کو مشکلات کاسامنا ہے جب کہ صنعتوں میں پیداواری عمل گیس پریشر کی وجہ سے بری طرح متاثر ہو رہا ہے
سردیوں سے قبل ہی شہر کے بیشتر علاقوں میں شہریوں کو گیس پریشر میں کمی کاسامناہے جب کہ بعض علاقوں میں گیس بالکل غائب ہے۔ لیاری، اورنگی ٹاؤن سمیت اولڈ سٹی ایریاز میں صورت حال زیادہ خراب ہے اورگھروں میں کھانا نہیں پک رہا ،جس کے بعد شہری ہوٹلوں سےکھانا خریدنے پر مجبور ہیں۔

دوسری جانب گیس کی قلت کے باعث پہلے سے مشکلات کا شکار صنعتیں مزید مشکل میں آگئی ہیں، صنعتوں میں مال نہیں بن رہا اور پیداواری عمل ٹھپ ہو کر رہ گیا ہے۔
چیئرمین سی این جی اسٹیشنز اونرز ایسوسی ایشن کے مطابق کراچی میں 30 فیصد سی این جی پمپس گیس پریشرنہ ہونے کے سبب بند ہیں جب کہ بعض علاقوں میں گیس پریشرکبھی کم اورکبھی زیادہ ہورہا ہے۔
ذرائع کے مطابق پرانی گیس فیلڈز کی پیداوار میں کمی ہوئی ہے جس کے اثرات سامنے آنا شروع ہوگئے ہیں۔

ذرائع کا کہنا ہے کہ سوئی سدرن کے نظام میں گیس کمی کا حجم 100سے بڑھ کر150 ملین مکعب فٹ ہوگیا جس کے باعث رواں موسم سرما میں گیس قلت بڑھنے کا خدشہ ہے۔

گیس میں کمی کے ساتھ ساتھ شہر میں بجلی کی بھی لوڈشیڈنگ 10گھنٹے تک کی جارہی ہے اور کے الیکٹرک نے اس کی وجہ بھی گیس فراہمی میں کمی کو ٹھہرایا ہے۔
ادھر وزیر توانائی سندھ امتیاز شیخ نے گیس اور بجلی کی لوڈشیڈنگ پررد عمل دیتے ہوئے کہا ہے کہ کے الیکٹرک اور سوئی سدرن گیس کمپنی( ایس ایس جی سی) کراچی کے ساتھ دشمنوں والا سلوک کر رہے ہیں۔
امتیاز شیخ کے مطابق سردیاں شروع ہونے سے قبل گیس کی لوڈشیڈنگ سمجھ سے بالاتر ہے،جبکہ وفاق نے کے الیکٹرک کو لوڈشیڈنگ کی کھلی چھوٹ دے رکھی ہے۔
جو عوام کے لیے مشکلات کا باعث بن رہا ہے .لیکن کراچی کی عوام کی کس کو فکر ہے؟

اپنا تبصرہ بھیجیں