بیگم شمیم اختر کا جسد خاکی جمعرات کو پاکستان لایا جائے گا

سابق وزیر اعظم نواز شریف کی والدہ کی میت جمعرات کو پاکستان روانہ کی جائے گی، جبکہ ڈیتھ سرٹیفکیٹ، این اوسی اور دیگرکاغذات کے حصول کی کوششیں جاری ہیں۔
تفصیلات کے مطابق سابق وزیر اعظم نواز شریف کی والدہ بیگم شمیم اختر کی میت کی لندن سے روانگی میں تاخیر کا امکان ہے، ذرائع نے بتایا ہے کہ نوازشریف کی والدہ کی میت جمعرات کو روانہ کی جائے گی، میت روانگی کیلئے ضروری کاغذات آج تیار ہو جائیں گے، ڈیتھ سرٹیفکیٹ، این اوسی اور دیگرکاغذات کے حصول کی کوششیں جاری ہیں۔
ذرائع کے مطابق میت کے ساتھ برطانیہ سے پاکستان کون جائے گا، ابھی تک اس کا فیصلہ نہیں ہو سکا۔

ن لیگ مرکزی ڈپٹی جنرل سیکریٹری عطا تارڑ نے بتایا کہ بیگم شمیم اختر کے جسد خاکی کے ہمراہ نواز شریف ساتھ نہیں آئیں گے،کیونکہ ان کے ڈاکٹرز نے انہیں‌سفر کی اجازت نہیں دی. ان کا کہنا تھا کہ شریف میڈیکل سٹی میں مرحومہ کی نماز جنازہ ادا کی جائے گی۔
عطاتارڑ کا کہنا تھا کہ شہبازشریف اور حمزہ شہباز کی پرول پر رہائی کے لیے درخواست دے دی ہے، وزیراعلیٰ نے درخواست کابینہ سب کمیٹی برائے داخلہ کو بھجوا دی ہے، عثمان بزدار نے رہائی کا اختیار کابینہ کی سب کمیٹی کو دے دیا ہے۔
نواز اور شہباز شریف کی والدہ بیگم شمیم اختر 93 برس کی عمر میں لندن میں انتقال کرگئیں تھیں۔ ان کی طبیعت پچھلے ایک ماہ سے خراب تھی
ان کے انتقال پر آرمی چیف جنرل قمر جاوید باجوہ، وزیراعظم عمران خان، صدر مملکت عارف علوی سمیت ملک بھر کی سیاسی و مذہبی شخصیات نے اظہار تعزیت کیا

اپنا تبصرہ بھیجیں